آپ کی معلومات

Saturday, 21 March 2015

اذالۃ الاکنۃ عن بعض المواضع فی تمام المنۃ للالبانی لشیخ الاسلام محب اللہ شاہ راشدی رح

0 comments

ترتیب :ابن بشیر الؔؔحسینوی فائدۃ مھمۃ حول التعلیقات :اعلم رحمک اللہ ان اکثر التعلیقات علی الکتب للشیخ محب اللہ ولھا بعضھا مطلق و بعضھا بکنیتہ ابی القاسم او بابی الروح و بعضھا لابن الشیخ قاسم و بعضھا لحفید الشیخ انور و بعضھا لفیض الرحمن الثوری رحمہ اللہ۔ وعلامات التعلیقات فی ھذالکتاب ھی: تعلیقات الشیخ محب اللہ بدون ای اسم۔ اما تعلیقات اخر بصراحۃ اسمہم ا وکنیتھم۔ المراد بابی احسان اللہ او ابن محب اللہ ھو الشیخ العلامۃ قاسم شاہ راشدی حفظہ اللہ وبا بی المحبوب ھو الاخ الفاضل انورشاہ راشدی حفظہ اللہ و تعلیقات الشیخ المحدث فیض الرحمن الثور ی رحمہ اللہ باسمہ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اذالۃ الاکنۃ عن بعض المواضع فی تمام المنۃ للالبانی قولہ :۔۔۔ففی مثل ھذا یعمل بہ فی فضائل الاعمال (ص:۳۵) اقول:ھذا المعنی ھوالذی ذکرہ العلامۃ ابوالفیض محمد بن علی الفارسی فی جواہر الاصول و ھو الصحیح ۔ قولہ:فکیف بمن عمل بہ (ص:۳۷) اقول:انظر الصفحۃ السابقۃ (یعنی التلیق الماضی) قولہ:ولو قدرنا ان مثل ھذاالفعل قد قام ما یدل علی التاسی بہ فیہ لکان خاصا بالعمران ۔۔۔(ص:۶۰) اقول:بل الدلیل موجود کانہ لو کان خاصا بہ لاخبر النبی ﷺ بانہ خاص بہ او لاخبر الذی لا تخفی علیہ خافیۃ فی الارض ولا فی السماء حتی لا تغتر الامۃ من فعلہ ﷺ ثم کیف یکون ھذا خاص بہ ﷺ ؟والمنع انما القبلۃ فھل یتصور مسلم ان النبی ﷺ مستثنی من احترام القبلۃ ؟لا بل ھو اول من رای احترام القبلۃ فتدبر! قولہ :افلا یکون البول والغائط تجاھھا محرما من باب اولی ۔(ص:۶۰) اقول:ھذا قیاس مع الفارق لان جدر الابنیۃ الاخر تصلح ان تکون قبلۃ للمصلی و غیرہ واما جدار الکنیف فلا یصلح ان یکون قبلۃ لان الکنف لا تصح فیھا صلاۃ اصلا فالفارق موجود فتامل! قولہ: ھذا الحدیث لا یصح متنہ ۔۔(ص:۶۶) قال الاخ الفاْضل ابوالمحبوب:ْھذا الاضطراب غیر قادح فی صحۃ الحدیث و ھذا ما اثبتہ استاذنا الشیخ ارشاد الحق الاثری فی مقالاتہ المجلد الثانی متعاقبا علی الشیخ ثناء اللہ حفظہ اللہ ۔ قولہ:(عن ابن مقدم)ولم یوثقہ فی التقریب فانہ اقتصر علی قولہ فیہ وکان یدلس شدیدا ۔(ص:۷۰) اقول:ھذا عجیب فان الحافظ قال فی التقریب :(واسطی ثقۃ )ثم قال ما ذکرہ العلامۃ ھنا فلیتنبہ لذلک ۔ قولہ:لا یشک فیہ ذلک ای منصف (ص:۸۱) اقول:لعل الصواب ’’فی ذلک ‘‘۔واللہ اعلم قولہ:ووقع فی روایتھم فتوضا ثم صلی ثم قال ۔۔۔۔۔‘‘و ھذا یدفع ترجمۃ ابن السنی حیث قال :’’باب ما یقولہ بین ظہرانی وضوۂ ۔‘‘لتصریحہ بانہ قال بعد الصلاۃ ،و یدفع احتمال کونہ بین الوضوء والصلاۃ۔‘‘(ص:۹۵) اقول:ماالمانع ان یکون النبی ﷺ قال ذلک فی الوضوء والصلاۃ ایضا فالتعلیل بمثل ھذا اللباب الفاضل للالبانی واللہ الموفق ۔ قولہ:ففی سماعہ من ابی موسی نظر (ص:۹۵) اقول:فی ھذا نظر فانہ لا یلزم من کون احد من التابعین لم یسمع من صحابی قد مات بعد مدۃ من زمان انہ لم یسمع من کان مات قبل ذلک الصحابی المتاخر الوفاۃ فھذا الحسن البصری قد سمع خطبۃعثمان رضی اللہ عنہ کما ھو مصرح فی المعجم الکبیرللطبرانی بسند جید ولکنہ لم یسمع من ابی ھریرۃ رضی اللہ عنہ وقد تاخر وفاتہ بعد عثمان رضی اللہ عنہ بمدۃ مدیدۃ فھذ شیء لا طائل تحتہ واللہ الموفق للصواب ۔ قولہ:وقد وجدت للحدیث علۃ اخری وھی الوقف فقد اخرجہ ابن ابی شیبۃ فی المصنف :(۱۔۲۹۷)من طریق ابی بردۃ قال کان ابو موسی اذا فرغ من صلاتہ قال : اللھم اغفرلی ذنبی و یسر لی امری و بارک لی فی رزقی‘‘وسندہ صحیح ۔(ص:۹۶) اقول:والاسف ان العلامۃ الالبانی رحمہ اللہ لم یراع تفاوت الفاظ الدعائین ۔ثم انہ یحتمل ان یکون الدعاء قد ورد فی الوضوء والصلاۃ فلا وجہ للاعلال بہ فتدبر ۔ واما الاعلال بالانقطاع فان احدا من الائمۃ المتقدمین لم یقل بعدم سماع ابی مجلز من ابی موسی رضی اللہ عنہ حتی الامام ابن ابی حاتم لم یذکرہ فی مراسیلہ و لم نر للحافظ ابن حجر سلفا فی تشکیک سماع من ابی موسی رضی اللہ عنہ ولم یذکر علی ذلک شیئا من الدلیل و غایۃ ما قال انہ کان یرسل والفرق بین الارسال والتدلیس بین لایخفی من مثل الحافظ ولا یلزم من کون احد من التابعین قد ارسل عن صحابی فی موضع او موضعین انہ کان یرسل فی کل موضع ۔نعم:اذا کان قد صرح احد من ائمۃ الجرح والتعدیل ان ھذا الرجل قد ارسل عن الصحابی الفلانی فھذا یکون سببا للقدح لا بمجرد الظن والتخمین و ابو مجلز من کبار الثالثۃ فسماعہ من ابی موسی رضی اللہ عنہ لیس ببعید فاذ لم یصرح احد من الائمۃ المتقدمین بعدم سماعہ من ابی موسی فسماعہ ھو الثابت المتیقن فلانترک الیقین بالوھم والشک فالحدیث۔ والحمدللہ۔ صحیح ۔واللہ اعلم بالصواب۔ وقد ادخل الحافظ المزی فی تھذیب الکمال ابا موسی الاشعری رضی اللہ عنہ فی شیوخ ابی مجلز ولم یتکلم بخلافہ وھذا موید لما ذھبنا الیہ واللہ الموفق ۔ قولہ:فالحدیث لیس دلیلا للحنفیۃ الذین یقولون بان اللمس مطلقا لا ینقض الوضوء بل ھو دلیل لمن یقول بان اللمس بغیر شھوۃ لاینقض بدلیل بسرۃ ،و بھذا یجمع بین الحدیثین ۔(ص:۱۰۳) اقول:قد ذل قلم العلامۃ الالبانی ھنا بل الصواب ان لیس الذکر ناقض للوضوء مطلقا وحدیث بسرۃ اصح من حدیث طلق ثم حدیث بسرۃ ورد بعد حدیث طلق والشواھد لحدیث بسرۃ موجودۃ وھذا ھو مذھب جمھور المحدثین وانظر الصحیح لابن حبان والمحلی لابن حزم وغیرھما فما ادری ماالحامل للعلامۃ الالبانی علی الانحراف عن ھذا المسلک المنصور۔ وباللہ التوفیق ۔ قولہ:فالاقرب ۔واللہ اعلم۔ان المراد بالطاھر فی ھذا الحدیث ھو المومن ۔(ص:۱۰۷) اقول:لکن ما ھی القرینۃ علی ھذا الحمل؟اقول :الیست القرینۃ الحدیث المتفق علیہ’’المومن لا ینجس‘‘واللہ اعلم ۔ قولہ:لقولہ ﷺ :من غسل میتا فلیغتسل ،ومن حملہ فلیتوضاء۔وھو حدیث صحیح۔۔(ص:۱۱۲) اقول: فیہ نظر لان الحدیث لایصح منہ الا طریق اسحق مولی زائدۃ وقد قالہ البخاری :بما نقلہ عنہ الترمذی فی عللہ الکبیر فی ھذہ الطریق ان الصواب فیہ الوقف فاین الصحۃ الوقف فاین الصحۃ رفعا ؟ثم لو کان بثبت عندہ مرفوعا صحیحا فما الصارف لہ عن حمل الامر علی الوجوب الی الاستحباب؟ قولہ:وبینا المراد من الحدیث ھناک وانہ لا یدل علی تحریم مس القرآن علی المومن مطلقا ۔فراجعہ۔(ص:۱۱۶) اقول:لکن العلامۃ الالبانی رحمہ اللہ لم یذکر القرینۃ لحملہ علی ھذا المعنی کما ذکرنا ھناک فتدبر انظر تعلیق التغلیق ص:۱۰۷۔ قولہ:ان فی سندہ عامر بن السمط ابا الغریف ولم یوثقہ غیر ابن حبان۔(ص:۱۱۷) اقول:قد ارتکب العلامۃ البانی رحمہ اللہ ھنا غلطا فاحشا لم نکن نتوقع صدورہ من مثلہ، اما اولا: فانہ جعل عامر بن السمط وابا الغریف رجلا واحدا فالحال انھما رجلان فاما عامر بن السمط فثقۃ کما فی التقریب و اما ابو الغریف فاسمہ عبیداللہ بن خلیفۃ فھو کما قال الحافظ ’’صدوق‘‘فقد وثقہ ابن حبان وقال ابو حاتم کان علی شرطۃ علی رضی اللہ عنہ ولیس بالمشھور وقیل لہ ھو احب الیک او الحارث الاعور قال:الحارث اشھر وھذا شیخ قد تکلموا فیہ من نظراء اصبغ بن نباطۃ وقد اطلق ابو حاتم علیہ اسم الشیخ وھو من ادنی مراتب التعدیل واما المتکلم فغیر معلوم وکذلک ما ھو الکلام الذی قد قیل فیہ فھو حین ذلک معروف عند ابن ابی حاتم لا مجھول وذکر الحافظ فی التقریب ان ابن سعد قال فیہ کان قلیل الحدیث وقال العجلی کوفی وذکرہ البرقی فیمن احتملت روایتہ وقد تکلم فیہ ۔انتھی ۔فمن کانت حالہ مثل ما ذکرناہ فی مثل ابی الغریف لا یکون مستورا او مجھول الحال فضلا ان یکون مجھول العین فصواب فی ذلک ان ابا الغریف صدوق ۔ [وقال ابوالمحبوب حفظہ اللہ:فال فیہ یعقوب بن سفیان الفسوی :وھو ثقۃ ۔(کتاب المعرفۃ:۳۔۲۰۰)] واما ثانیا فانہ حذف لفظ ’’الشیخ ‘‘من عبارۃ ابی حاتم فانہ کان مضرا لہ۔واللہ اعلم ۔قد قال محقق اثری العلامۃ احمد الشاکر ’’اسنادہ صحیح ‘‘۔۔وابو الغریف اسمہ عبیداللہ بن خلیفۃ الھمدانی ذکرہ ابن حبان فی الثقات وکان علی شرطۃ علی والحدیث رواہ البخاری فی الکبیر ۴۔۱۔۶۰۔۶۱عن احمد بن اشکاب عن عائذ فلم یعللہ بشیء وانظر شرحنا علی الترمذی :۱۔۲۷۳۔۲۷۵انتھی قلت :فھذا امام المحدثین یذکر حدیث ابی الغریف عن علی رضی اللہ عنہ ولا یعللہ بشیء فالحدیث عندہ علی الاقل حسن و ناھیک بتحسین ھذا الحدیث من مثل امام المحدثین ابی عبداللہ البخاری رحمہ اللہ ۔واللہ اعلم بالصواب۔ وقال ابوالمحبوب:فی منھج الامامین (احمد شاکر و ابی القاسم رحمھما اللہ )نظر لان سکوت البخاری علی ای راو و روایۃ فی کتبہ لا یدل علی توثیق الروایۃ و رواتھا قد رد علی ھذا المنھج شیخ العرب والعجم بدیع الدین الراشدی رحمہ اللہ حیث قال ردا علی ظفر احمد تھانوی :’’یکفی لبطلان ھذا الاصل ان الامام البخاری نفسہ سکت عدۃ من الرواۃ فی تاریخہ و جرحھم فی کتب اخری مثال ذلک انہ ذکر فی تاریخہ الحارث بن النعمان اللیثی و الصلت بن مھران التیمی الکوفی ابا ھاشم وعبداللہ بن معاویہ من ولد الزبیر بن العوام الاسدی البصری وعبداللہ بن محمد بن عجلان مولی فاطمۃ بنت عتبۃ القرشی و عبدالرحمن زیاد بن انعم الافریقی وعبدالوھاب بن عطاء الخفاف و عمران العمی و عاصم بن عبیداللہ العمری و معاویۃ بن عبدالکریم الثقفی ابا عبدالرحمن البصری ومختار بن نافع ابااسحق التیمی و نصر بن حماد بن عجلان و یحیی بن سلیمان المدنی و یحیی بن محمد الجاری ولم یتکلم احد منھم ولاجرحہ و ذکر کلھم فی ضعفاء الصغیر وجرحہم ثم من قابل تواریخہ مع الجرح والتعدیل لابن ابی حاتم والمیزان واللسان وا لتھذیب و جد ذلک کثیرا ۔(نقض قواعد فی علوم الحدیث ص:۲۱۴) قولہ:حماد بن ابی سلیمان قال:سالت سعید بن جبیر عن الجنب یقرا ؟فلم یر بہ باسا ۔وقال :الیس فی جوفہ قرآن؟(ص:۱۱۸) اقول:فیہ ان القرآن فی جوفہ وھو یضاجع امراتہ وایضا ھو فی جوفہ وھو یبول ویتغوط فھل یجوز لہ ان یقرا القرآن فی ھاتین الحالتین؟وقد کان ﷺ یقول بسم اللہ اللھم انی اعوذ بک من الخبث والخبائث اذا اراد ان یدخل الخلاء لا حین یکون داخلا فیہ فتدبر ۔ قال ابو المحبوب:اما اثر سعید بن جبیر الذ ی ذکرہ الالبانی رحمہ اللہ مستدلا بہ فھو ضعیف لان فیہ حماد بن ابی سلیمان الاشعری وھو ان کان صدوقا قد اختلط فروایۃ القدماء مثل شعبہ و سفیان الثوری و ھشام الدستوائی عنہ صحیحۃ کما صرح بہ احمد بن حنبل وغیرہ لانھم سمعوا منہ قبل الاختلاط و اما غیرھم سمعوا منہ بعد الاختلاط فھذا منھم ۔راجع الی (تھذیب الکمال :۷؍۲۷۱۔۷۲) قولہ:یضاف الی ذلک ان جسرۃ ھذہ لم یوثقھا من یعتمد علی توثیقہ۔(ص:۱۱۸) اقول:جسرۃ بنت دجاجۃ رمز لھا الحافظ فی التقریب (دس ق)قال:مقبولۃمن الثالثۃ ویقال ان لھا ادراکا۔اقول:من کان ھذا حالھا فکیف یرد حدیثھا فاقل درجاتھا الحسن خاصۃ وان العلۃ الاولی وھی الاضطراب غیر قادحۃ اذا المقرر عند المحدثین انہ فی الصحابی لا یضر ۔واللہ اعلم قال ابوالمحبوب:اما تضعیف الالبانی رحمہ اللہ لجسرۃ بنت دجاجۃ علی اعتماد قول البخاری ھذا (وعند جسرۃ عجائب )فیہ نظر لان کلمۃ البخاری لیست من الجرح فی شیء وھو ما صرح بہ وقال ابوالحسن بن قطان فی بیان الوھم والایھام (۵؍۳۳۱)واما جسرۃ بنت دجاجۃ فقال فیھا الکوفیۃ تابعیۃ ثقۃ وقول البخاری ان عندھا عجائب ۔لایکفی لمن یسقط حدیثھا وقال ابن القطان فی کتابہ المذکور (۶؍۳۵۳)جسرۃ ھذہ معروفۃ یوثقھا قوم و یتوقف فی روایتھا قوم آخرون ۔ وقال ایضا الحافظ الذھبی فی المیزان (۱؍۳۹۹)فقال:’’قولہ :ای البخاری ،عندھا عجائب لیس بصریح فی الجرح بل وثقھا العجلی وقال :تابعیۃ ثقۃ۔وذکر ھا ابن حبان فی ثقات التابعین وصحح حدیثھا ابن خزیمۃ (۱۳۲۷) قولہ:وتقریر جمیع الحاضرین من الصحابۃ وغیرھم لما وقع من ذلک الانکار ،لھو من اعظم الادلۃ القاضیۃ بان الوجوب کان معلوما عند الصحابۃ ولو کان الامر عندھم علی عدم الوجوب لما عول ذلک الصحابی فی الاعتذار علی غیرہ ،فای تقریر من عمر ومن حضر بعد ھذا الانکار ؟!(ص:۱۲۰) اقول:فیہ انہ لو کان الامر کما ذکر لامرہ عمر رضی اللہ عنہ ان یرجع فیغتسل ثم یر جع الی المسجد لان الغسل علی ما ذکرتم فرض یجب اتیانہ قبل الخروج لصلوۃ الجمعۃ واما ما یکمن ان یقال ان عمر رضی اللہ عنہ کان یخطب فلو امر بالخروج لیغسل لفاتہ صلاۃ الجمعۃ ؟فالجواب:ان عمر رضی اللہ کان یمکنہ ان یطول خطبتہ قدر خمس او عشرۃ دقائق ففی قدر ھذا الزمان امکنہ الغسل والحضور للصلوۃ ۔واللہ اعلم ۔ وقال ابو المحبوب :لو کان عثمان رضی اللہ عنہ اذن جنبیا فھل یقبل عذرہ و یسقط عنہ فرض ؟ان لا و کلا ۔فھذا الدلیل لیس بنافع واللہ اعلم ۔ثم رایت فی الارواء قد رجح الالبانی رحمہ اللہ باستحباب الغسل یوم الجمعۃ وقد الفت فی ترجیح استحباب الغسل یوم الجمعۃ رسالۃ مفصلۃ وھی مطبوعۃ فی دعوت اھل حدیث رقم:۹۱۱والحمدللہ علی ذلک ۔ قولہ:فی ھذا الاستدلال نظر ،اما الاثر عن ابن عمر ،فموقوف ولا حجۃ فیہ ان صح ،ثم الظاہر ان المراد منہ ما یراد من الحدیث ،وھو ان السنۃ الوضوء قبل الغسل لا بعدہ ۔(ص:۱۲۹) اقول:کیف و انت قد خصصت امر اعفاء اللحیۃ بفعل صحابی وھنا تقول ما قلت ،فتامل۔واللہ اعلم ۔ قولہ:ینتج منھما انہ ﷺ کان یصلی بالغسل الذی لم یتوضاء فیہ ولا بعدہ واللہ اعلم ۔(ص:۱۲۹) اقول:فی حدیث جابر رضی اللہ عنہ بیان اقل الغسل فمن این یاخذ العلامۃ الالبانی عدم الوضوء۔فتفکر۔ قولہ:فاحدھما یقوی الآخر ولھا طریق ۔۔۔(ص:۱۵۳) اقول:ھذا عجیب من ھذا الفاضل ۔۔۔۔۔ تسامحنا اللہ تعالی وایاہ ۔ قولہ:لکن یقویہ ما عند ابن ابی شیبۃ من طریق قتادۃ عن ام الحسن انھا رات ام سلمۃ زوج النبی ﷺ توم النساء تقوم معھن ۔(ص:۱۵۴) اقول:لکن فیہ قتادۃ و قد عنعن فاین الصحۃ ومع ھذا فھذہ عدۃ آثار یقوی بعضھا بعضا فالمسئلۃ علی حالھا ۔واللہ اعلم۔ تنبیہ:قال ابوالمحبوب:رایت مرۃ یضر الالبانی عنعنۃ قتادۃمثلا انظر الارواء:۱؍۳۹ و یدافع عنہ اخری مثلا انظر النصیحۃص:۱۰۹،الصحیحۃ:۵؍۶۱۴ والصواب ان قتادۃ مدلس مشھور معروف بکثرۃ التدلیس ذکرہ ابن حجر فی طبقات المدلسین من المرتبۃ الثالثۃ وقال :مشہور بالتدلیس ،وقال الذھبی وھو حجۃ بالاجماع اذا بین السماع (السیر:۵؍۲۷۱)اراد انہ کثیر التدلیس لذلک یشترط بتصریح سماعہ علی قبول روایتہ ۔ قولہ:وبالجمۃ فھذہ الآثار صالحۃ للعمل بھا ولاسیما وھی مویدۃ بعموم قولہ ﷺ (انما النساء شقائق الرجال )کما تقدم فی ما نقلناہ لک من کلام الشوکانی فی السیل الجرار فتذکر فانہ مھم ۔(ص:۱۵۵) اقول:اما الاقامۃ فلا فیھا علی النساء ایضا و ھذا ھو الصحیح واما الاذان فما الحاجۃ لھن الیہ والاذان یودی فی بلاد المسلمین و قراھم فھل ھنا دلیل علی ان النساء مامورات ان یوذین لانفسھن حاجبۃ فمن کان عندہ دلیل علی ھذا فلیھدنا وعلی اللہ اجرہ ۔ __________________

Wednesday, 18 March 2015

خزانۃ الکتب

0 comments

محمد اسلام دینی موضوعات پر کام کرنے والے مقالہ نویسوں کو میرے خیال کے مطابق المکتبۃ الشاملۃ سے شروع کرنا چاہیئے۔ اڑاتالیس جی بی، چوہتر جی بی اور ایک سو پچاس جی بی حجم کا مکتبہ شاملہ آج کل طلبہ کے درمیان مروّج ہے۔ اس میں کتب کی اکثریت پی ڈی ایف فارمیٹ میں بھی ہے۔ تفسیر، علوم القرآن، اصول تفسیر، حدیث، اصول حدیث، شروح حدیث، اسماء الرجال، جرح وتعدیل، فقہ ، اصول فقہ، فقہ مذاہب اربعہ، اخلاقیات، بلاغت، معاجم، صرف و نحو ، منطق و فلسفہ، تاریخ ، ادب عربی، وغیرہ علوم سے متعلق اس میں شامل بہت سی کتب اساسی حیثیت رکھتی ہیں۔ یہ بات اہل علم و اصحاب تحقیق سے مخفی نہیں کہ مکتبہ شاملہ میں شامل ساری کتب عربی زبان میں ہیں۔ آپ چاہیں تو اس کے ہیکل میں مزید ایسی کتب کا اضافہ بھی کر سکتے ہیں جو آپ کے خیال میں اس میں شامل ہونی چاہیئں۔ اگر ایک مقالہ نویس تصوف سے متعلق کسی موضوع پر کام کرنا چاہتا ہو تو اردو زبان میں موضوع سے متعلق سینکڑوں کتب اس ویب سائٹ پر دیکھ سکتا ہے: www.maktabah.org/aa/urdu-books۔ اسی طرح (www.marfat.com) ایک ایسی ویب سائٹ ہے جس پر تفسیر، علوم القرآن، حدیث، سیرت، تصوف،فقہ وغیرہ علوم وفنون سے متعلق ہزاروں کتب اردو زبان میں مفت ڈاؤنلوڈ کی جا سکتی ہیں۔ اسی طرح کی ایک ویب سائٹ (www.nafseislam.com) ہے جہاں سے ایک مقالہ نگار ہزاروں کتب مفت میں ڈاؤن لوڈ کر سکتا ہے۔مطالعۂ عیسائیت کے لیے اردو کتب کی بہت اچھی ویب سائیٹ (http://only1or3.com) ہے جس پر پاک وہند وغیرہ کے علماء کی کتب اصل شکل میں دستیاب ہیں۔ ان ویب سائٹوں سے ایک مقالہ نویس اپنے موضوع سے متعلق کتب کا مطالعہ کر سکتا ہے اور پھر سابقہ کام کا جائزہ لے کر اپنے موضوعِ تحقیق کو آخری شکل دے سکتا ہے۔ علوم اسلامیہ و عربیہ کے متداول نصابِ تعلیم سے طلبہ کو عربی ادب بالخصوص عربی شاعری سے آگاہی ہوتی ہے۔ وہ سبعۃ معلقات، دیوان حماسۃ اور دیوان متنبی وغیرہ پڑھتے اور اپنے ذوق کے اشعار یاد بھی کرتے ہیں۔ اگر کوئی مقالہ نویس اس علم یا فن میں تحقیقی موضوع منتخب کرنا چاہے اور جدید عرب شعراء کےکلام کو جاننا چاہے تو اسے معلوم ہونا چاہیئے کہ دلچسپی اور ذوق رکھنے والوں نے ’’موسوعۃ الشعر العربی و الادب‘‘ تیار کیا ہے جس کے اصدار خامس میں ڈھائی لاکھ سے زائد اشعار شامل ہیں۔ بہت سے اشعار کی آڈیو آواز بھی اس موسوعۃ میں شامل ہے۔ اسے گوگل سرچ انجن کے ذریعے تلاش کرکے ڈاؤن لوڈ کیا جا سکتا ہے۔ اسے درج ذیل دو ویب سائٹوں (http://majles.alukah.net/t103055) اور (http://www.damasgate.com/vb/t315350) کی مدد سے بھی ڈاؤن لوڈ کیا جا سکتا ہے ۔ اگر کوئی مقالہ نویس عربی زبان میں اپنے موضوع سے متعلق کتب تلاش کرنا چاہے تو وہ درج ذیل ویب سائٹوں سے استفادہ کر سکتا ہے: شبکۃ ابن مریم الإسلامیۃ www.ebnmaryam.com/web/ شبکۃ مشکاۃ الاسلامیۃ www.almeshkat.net/books/index.php مكتبة المصطفى www.al-mostafa.com/ مکتبۃ الإسکندریۃ http://www.bib-alex.com/ المکتبۃ الاسلامیۃ الالکترونیۃ الشاملۃ www.muslim-library.com/ مکتبۃ الألوکۃ www.alukah.net/library/ المکتبۃ الشاملۃ http://shamela.ws/ مکتبۃ المھتدین الاسلامیۃ لمقارنۃ الادیان http://al-maktabeh.com/ المکتبۃ الوقفیۃ http://waqfeya.com/ مکتبۃ جمیع الکتب http://allbooks1.com/ مکتبۃ خالدۃ www.khaldia-library.com/ مکتبۃ صید الفوائد http://saaid.net/book/index.php

Friday, 13 February 2015

ابن بشیر الحسینوی سوانحی خاکہ

1 comments
ابن بشیر الحسینوی 
مختصر سوانحی خاکہ:
نام : ابو محمد ناصر الدین ابراہیم بن بشیر احمد بن محمد یعقوب بن عمر الحسینوی
تاریخ پیدائش: ۱۸ اپریل ۱۹۸۳ء
جائے پیدائش : حسین خانوالا ہٹھاڑ قصور 
فون نمبر ز: 0302.0323.0316:4056187
0492723032
سکائپ:ibrahim.alhusainwy
فیس بک:ibnebashir alhusainwi 
ای میل : ialhusainwy@gmail.com
ویب سائٹس اینڈ بلوگز:
albisharah.blogspot.com
alhusainwy.blogspot.com
altahqeeqat.blogspot.com
پتہ:حسین خانوالا ہٹھاڑ تحصیل و ضلع قصور پاکستان
صدر:المؤسسۃ الاثریہ الخیریۃ پاکستان
چیئر مین :جامعہ امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ سٹی قصور 
متخرج جامعہ لاہور الاسلامیہ لاہور ،جامعہ محمدیہ گوجرانوالا و متخصص مرکز التربیۃ الاسلامیہ فیصل آباد
نائب شیخ الحدیث جامعہ امام بخاری گندہیاں اوتاڑ قصورسابقا نائب شیخ الحدیث دارالحدیث الجامعۃ الکمالیۃ راجووال اوکاڑہ سابقا
رکن مجلس شوری محدث فورم تدریسی تجربہ :دس سال
مشہور اساتذہ:
شیخ الحدیث حافط ثناء اللہ مدنی حفظہ اللہ شیخ الحدیث حافظ عبدالمنان نورپوری رحمہ اللہ 
شیخ الحدیث عبداللہ امجد چھتوی حفظہ اللہ محدث العصر شیخ ارشاد الحق اثری حفظہ اللہ 
شیخ الحدیث شفیق مدنی حفظہ اللہ شیخ الحدیث محمد رمضان سلفی حفظہ اللہ 
شیخ الاسلام حافظ مسعود عالم حفظہ اللہ اصولی دوراں حافظ محمد شریف حفظہ اللہ 
محقق العصر حافظ زبیر علی زئی رحمہ اللہ الشیخ المعمر محمد حیات لاشاری سندھی رحمہ اللہ 
دعوتی خدمات:
مستقل خطبہ جمعۃ المبارک جامعہ امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ سٹی قصور 
بعض جگہوں پر فکری و تربیتی دروس بھی ہوتے رہتے ہیں ۔
تصنیفات و تحقیقات


عربی کتب:
۱: تنبیہ المحققین علی تدلیس المدلسین المعروف بموسوعۃ المدلسین
۲: الفتح الجلیل فی ضوابط الجرح والتعدیل
۳: النصیحۃ لمن اراد قبول النصیحۃ فی التعلیق علی انوارالصحیفۃ 
۴: الاعلان فی معرفۃ من قیل فیہ لم یسمع عن فلان 
۵: التّبیین فی شرح اصل السنّۃ واعتقاد الدین 
۶: معجم الضعفاء والمجھولین (تحت الترتیب)
۷: موسوعۃ الأحادیث الشاذۃ
۸: الرد علی الھدایۃ للمرغینانی 
۹: علوم الحدیث عندالشیخ الالبانی
۱۰: تعلیقات علی تیسر مصطلح الحدیث للدکتور محمود طحان 
۱۱: موسوعۃ القواعد الفقہیۃ 
۱۲: زاہد الکوثری فی میزان الامام الالبانی رحمہ اللہ
۱۳: فقہ المحدثین عن احادیث صحیح البخاری۔ 
۱۴: حاشیۃ مشکوۃ المصابیح لطلبۃ الجامعات ،تحت الترتیب ۔
۱۵: تعلیقات الشیخ الاثری حفظہ اللہ علی سلسلتی الامام الالبانی رحمہ اللہ
۱۶: التقریر علی التقریب 
۱۷:الرجال عند علماء الاحناف جرحا وتعدیلا 
۱۸:سکوت المحدثین عن درجۃ الحدیث 
۱۹:الرد القوی علی العرف الشذی
۲۰:الاحادیث الضعیفۃ عندالامام البخاری 
۲۱:البرھان فی تناقضات ابن حبان 
۲۲:تلخیص الکواکب النیرات
۲۲:موسوعۃ احادیث الصیام 
اردو کتب:
۲۳: شرح صحیح مسلم فی ۷ ،اجزاء تحت الطبع فی باکستان
۲۴: شرح مقدمہ صحیح مسلم ۔تحت الطبع۔
۲۵: شرح الجامع الترمذی فی ۵،اجزاء۔غیر مطبوع۔
۲۶: شرح مسند الحمیدی ۔تحت الطبع 
۲۷: حاشیہ السنن الکبری للبیہقی تحت الترتیب 
۲۸: ائمہ قراء ت جر ح و تعدیل کی میزان میں (رشد قراء ت نمبر میں مطبوع ہے )
۲۹: اصول تخریج و تحقیق۔طبع علی انترنیت۔
۳۰: حسن لغیرہ حدیث کی حجیت پر وارد اشکالات کا علمی جائزہ ۔مطبوع علی انترنیت ۔ 
۳۱: سلسلۃ الاحکام الصحیحۃ طبع الجزء الاول 
۳۲: سلسلۃ الاحکام الضعیفۃ ۔ما طبع 
۳۳: فرق باطلہ کے تعاقب میں ۔طبع البعض فی الرسائل وانترنیت۔
۳۴: بالوں کا معاملہ ۔مطبوع 
۳۵: جانوروں کے احکام۔ تحت الطبع 
۳۶: التقریب لعلوم الشیخ المحدث ارشاد الحق الاثری حفظہ اللہ۔ ما طبع ۔ 
۳۷: نصیحتیں میرے اسلاف کی۔تحت البطع ۔
۳۸ سفر نامہ ابن بشیر الحسینوی ۔طبع علی انترنیت۔
۳۹: گھر کا دینی نصاب 
۴۰: جاہلوں کی دنیا 
۴۱: مساجد کے احکام۔ مطبوع
۴۲: الرد علی القدوری۔ غیر مطبوع
۴۳: الرد علی الھدایۃ للمرغینانی۔غیر مطبوع ۔
۴۴: شرح صحیح بخاری پرم کام جاری ہے 
۴۵: طہارت کے احکام 
۴۶: جوتے اور پاؤں کے احکام 
۴۷: درس ترمذی از تقی عثمانی کا تعاقب 
۴۸: آثار السنن کا تعاقب 
۴۹: میں محدث کیسے بنوں؟
۵۰: عورت کے گھر سے نکلنے کے احکام

مراجعت و تخریج و تحقیق:
۵۱: تحقیق وتخریج مسند الإمام احمد بمشارکۃ بعض الاخوۃ وہو مطبوع من دارالسلام الریاض 
۵۲: تحقیق بلوغ المرام تحت الطبع فی باکستان۔
۵۳: تحقیق وتخریج الإصلاح (الجزء الثانی)لمحمد الجوندلوی رحمہ اللہ۔مطبوع 
۵۴: تحقیق وتخریج کتاب الاذان لعبدالقادر الحصاری رحمہ اللہ ۔تحت الطبع۔
۵۵: تحقیق و تخریج الصحیحین لعبدہ الفلاح رحمہ اللہ۔غیر مطبوع۔
۵۶: تحقیق و تخریج ادعیۃ الرسول لعطاء اللہ حنیف البھوجیانی رحمہ اللہ ۔ماطبع۔
۵۷: راجع ’’تحقیق المعجم المختص للحافظ الذھبی ‘‘رسالۃ دکتورۃ للشیخ الدکتورمحمد عبدالرحمن یوسف حفظہ اللہ۔تحت الطبع ۔
۵۸ وراجع وقابل علی النسخ المطبوعۃ من الکتب الحدیثیۃ وصحّح،الجامع الکامل فی الحدیث الصحیح الشامل للمحدث ضیاء الرحمن الاعظمی المدنی فی۲۰ مجلدا ۔بمشارکۃ بعض الاخوۃ وہو تحت الطبع فی دارالسلام الریاض۔ 
۵۹: و راجع ترجمۃ صحیح ابن حبان۔تحت الطبع ۔
۶۰: المعلقات فی صحیح البخاری ۔دراسۃ علمیۃ ومنھجیۃ مع التحقیق و التخریج 
۶۱تا۷۵ : تخریج و تحقیق و تصحیح کتب محمد سعید محدث بنارسی 
۷۶: الآن ھو یعمل علی کتب بعض تلامیذ السید المحدث نزیر حسین دہلوی رحمہ اللہ ۔
۷۷: تخریج و تحقیق تحفۃ الجمعۃ لشیخ محمد یوسف راجووالوی رحمہ اللہ 
۷۸: تخریج وتحقیق اہل حدیث کے امتیازی مسائل
۷۹: تخریج و تحقیق زیارت قبور از اسماعیل سلفی رحمہ اللہ 
۸۰: تخریج و تحقیق شرکیہ دم جھاڑ پر فیصلہ کن بحث از محدث روپڑی
وغیرہ نوٹ:بعض مخطوطات دیکھنے کا موقع نہیں ملا ورنہ ان میں بھی کئی ایک میری ذاتی کتب کے مخطوط مل جائیں گے ۔
دعا:اللہ تعالی مجھ سے اپنے دین حنیف کا کام لے لے اور میرے لئے آسانیاں پیدا فرمائے آمین 
پاکستان کے درج ذیل رسائل وجرائد میں علمی و تحقیقی مضامین شایع ہوتے ہیں

ٍ الاعتصام بلاہور باکستان ضیاء حدیث بلاہور باکستان الحدیث حضرو اتک باکستان
تنظیم اہل حدیث لاہور جرار لاہور اسوہ کراتشی المکرم جوجرانوالا باکستان
دفاع اسلام کراچی 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Saturday, 7 February 2015

پانی کے احکام

0 comments

Wednesday, 4 February 2015

موسوعات حدیثیۃ

1 comments

شعبہ جالیات پاکتان کا تعارف

0 comments

 

الرئیس العام :ابن بشیر الحسینوی
مدیر شعبہ جالیات
: فضیلۃ الشیخ محمد آصف سلفی حفظہ اللہ

ََََََََََََََََََََ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کے تحت مختلف شاخیں ہیں 
عوامی سیکشن:
اس کے تحت مختلف جگہوں میں (تفہیم اسلام ،سوال وجواب سیکشن )کے نام سے پروگرام جاری ہیں جس مختصر درس ہوتا ہے پھر سوال وجواب کی تفصیلی نشست ہوتی ہے ہر کسی کو لکھ کر یا کھڑا ہو کر سوال کرنے کی عام اجازت ہوتی ہے اوریہ نشست کئی گھنٹوں پر مشتمل ہوتی ہے اس پروگرام کے تمام اخراجات مؤسسۃ برداشت کرتا ہے ۔اب تک کئی علاقوں میں مسلسل پروگرام ہو چکے ہیں 
مثلا کوٹ رادھاکشن ،کنگن پور ،شام کوٹ نوواں ،شام کوٹ پرانا ،جمشیر ،لالو کے ،پتو کی ،چھبر ،بھلو،حسین خانوالا ، ،لاہور ،سٹی قصور،گہلن ہٹھاڑ،چونیاں ،نیئکے ،منڈی احمد آباد،بھوئے آصل ،کانویں ملیاں ،جھجھ خورد ،جھجھ کلاں ،گوکلوال ،کھڈیاں خاص وغیرہ ۔یہ پروگرام عموما جمعرات یا اتوار کو ہوتے ہیں ۔
ٹریننگ سیکشن: 
جامعہ امام احمد بن حنبل قصور میں ہر بدھ بعد نماز عشاء حفاظ ،طلبہ ،ائمہ مساجد اور مبلغین کو ٹریننگ دی جاتی ہے جس کے درج ذیل مقاصد ہیں 
۱:فن تقریر میں ماہر بنانا ۲:مکتبہ شاملہ سے سرچ و تحقیق کرنے کا طریقہ ۳:عوام کے سوالات کے جوابات دینے کی پریکٹس 
۴:انٹرنیٹ میں مہارت ۵:جدید فقہی مسائل کا حل ۶:فن تصنیف و تحقیق میں مہارت 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۲:شعبہ داعیہ جوال(چلتے پھرتے مبلغین) 
اور بعض ساتھی مؤسسہ کے اس شعبہ کے ساتھ مصروف عمل ہیں ۔ 
اس کے تحت جامعہ کی طرف سے مستقل ٹیم مسلسل تبلیغ کررہی ہے جو دن رات قرآن وحدیث کی تبلیغ اور امر بالمعروف اور نہی عن المنکر کے اہم فریضہ میں مصروف ہے ،اس شعبہ میں ہمارے مبلغین کی ٹیم درج ذیل ہے 
شیخ بابر آغاحفظہ اللہ(شام کوٹ پرانا) ،قاری شعبان حفظہ اللہ ،قاری عبدالغفار احسن (کھڈیاں خاص)محمد امین ڈوگر (نواں قلعہ)
بابا ئے تبلیغ محمد اسحاق حفظہ اللہ(الہ آباد) ،سید خالد شاہ حفظہ اللہ(الہ آباد) ،عبیداللہ محسن حفظہ اللہ ،عبدالخالق عرف ابن تاجر حفظہ اللہ (الہ آباد)،چوہدری سرفراز گجر (لاہور)،کلیم اللہ بہالپوری حفظہ اللہ (بہاولپور) ،قاری اعظم حفظہ اللہ ،قاری عبدالمعید ،قاری ساجد الرحمن (کنگن پور)محمد بلال سلفی حفظہ اللہ،شیخ ابوبکر ھاشمی حفظہ اللہ (گہلن ہٹھاڑ)محمد عمران (گوکلوال ،اوکاڑہ)شیخ عبدالحفیظ محسن حفظہ اللہ (جھجھ کلاں) 
فخر عباس حفظہ اللہ ،محمد فیصل حفظہ اللہ ،حافظ عبدالعظیم حفظہ اللہ حافظ محمد بلال مدنی حفظہ اللہ ،قاری اسلم مدنی حفظہ اللہ ،میاں محمد انس حفظہ اللہ،مقصود توحیدی کنگن پوری حفظہ اللہ،فیصل شریف حفظہ اللہ ،شیر خان لالو کے،محمد رضوان حفظہ اللہ ،حافظ عبدالسلام حفظہ اللہ، محمد بلال مدنی حفظہ اللہ، محمد شفیق انجنیئر حفظہ اللہ،عدنان انجنیئر(فاسٹ یونیورسٹی لاہور) ،ریاض انجنیئر حفظہ اللہ ،زین انجنیئر(نسٹ یونیورسٹی اسلام آباد)،مولانا عثمان باری حفظہ اللہ (فیصل آباد )،حافظ سمیع اللہ (اسلام آباد ) صہیب عبداللہ کراچی ،شیخ صہیب حفظہ اللہ ،حافظ کاشف (فیصل آباد)مولانا کامران ،وہاڑی ،استاذ الحفاظ قاری محمد حنیف نییں کی ،قاری سہیل عدنان حفظہ اللہ،حکیم بابا شوکت حفظہ اللہ (کوٹ رادھا کشن)قاری توقیر ،قاری عبدالمنان ،قاری عبدالمجیب ،قاری صدیق بلوچ (سٹی قصور)شیخ عثمان (چیچہ وطنی)شیخ عمر فاروق ہاشمی 
اور ہماری ٹیم میں مسلسل اضافہ ہو رہاہے عنقریب یہ بہت بڑی ٹیم ہو گی اور پوری دنیا میں کام کرے گی ۔ان شاء اللہ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جالیات tv pk 
انٹرنیٹ پرjaliat pk tv کا قیام کر دیا گیا ہے جہاں شعبہ جالیات کے تبلیغی و اصلاحی پروگرام نشر کئے جائیں گے ا ور پوری دنیا ان سے فائدہ اٹھا ئے گیاان شائ اللہ۔اور درس نظامی کی بعض اہم کلاسز بھی نشر کی جائیں گی ان شاء اللہ ۔ 

شعبہ جالیات کے مدیر 

الرئیس العام :ابن بشیر الحسینوی
مدیر شعبہ جالیات 
۲: فضیلۃ الشیخ محمد آصف سلفی حفظہ اللہ

تدریسی تجربہ :تین سال 
مدرس دارالحدیث الجامعۃ الکمالیۃ راجووال سابقا مدیرالتعلیم جامعہ امام احمد بن حنبل سٹی قصور و مدیر شعبہ جالیات پاکستان فاضل جامعہ سلفیہ فیصل آباد
مشہور اساتذہ:
شیخ الحدیث عبدالعزیز علوی حفظہ اللہ شیخ الاسلام حافظ مسعود عالم حفظہ اللہ نائب شیخ الحدیث محمد یونس بٹ حفظہ اللہ
پروفیسر یسین ظفر حفظہ اللہ مفتی عبدالحنان زاہد حفظہ اللہ 
تصنیفی خدمات:
خلفاء ثلاثہ کی اہل بیت کے ساتھ الفت اور رشتہ داریاں 
اب تاریخ اہل حدیث پر کام کرنے کا عزم مصمم رکھتے ہیں ۔
دعوتی خدمات:
جامعہ کے شعبہ جالیات کے مدیر ہیں اس کے تحت ملک بھر میں مستقل تفہیم اسلام کورسز اور سوال وجواب سیکشن کروا رہے ہیں اب تک تیس سے زیادہ جگہوں پر ہفتہ وار ،پندرہ روزہ اور ماہانہ کلاسز جاری ہیں اس میں روایتی انداز سے ہٹ کر کام کررہے ہیں اور کئی کئی گھنٹوں پر مشتمل سوال و جواب سیکشن ہوتا ہے ۔جس علاقہ میں بھی پروگرام ہو وہاں کے عوام ہی نہیں بلکہ اہل علم بھی بہت زیادہ استفادہ کرتے ہیں اور عوام میں بیداری پیدا ہو رہی ہے ان پروگراموں کی وجہ سے لوگ دین اسلام کی حقانیت سے بہت زیادہ متاثر ہورہے ہیں اور اپنے اپنے علاقوں میں لائبریریاں بنا رہے ہیں اور کئی ایک جگہوں پر توجہ دلانے کی وجہ سے حلقات علمیہ قائم ہو چکے ہیں ،اور تمام لوگوں کو پروگرام سے آخر میں جامعہ میں کچھ دن وقت نکال کرآنے کا وعدہ لیا جاتا ہے اور بعض لوگ جامعہ میں وقت بھی دے رہے ہیں انھیں پروگراموں کی وجہ لوگ اپنے بیٹے بھی دینی تعلیم کے لئے وقف کر رہے ہیں اور انھیں پروگراموں بعض باطل فرق بھی اپنے اشکالات لے کر حاضر ہوتے ہیں اور بحث و مناظر ہ کرتے ہیں اب تک الحمدللہ کئی لوگ باطل فرق اور باطل عقائد و نظریات کو چھوڑ کر قرآن و حدیث کی طرف آچکے ہیں ،نیز یہ بات قابل ذکر ہے کہ ہمارا یہ پروگرام بلا تفریق تمام مکاتب فکر کی مساجد میں ہو رہے ہیں مثلا جماعۃ المسلمین ،بریلوی اور دیوبندی کی مساجد میں والحمدللہ۔خاص کر فریضۃ العلم (وہ علم جس کا ہر مسلمان پر سیکھنا فرض ہے )پر بہت زیادہ توجہ دی جاتی ہے ۔ 
انگریزی ماہ کا پہلاخطبہ جمعہ :جامعہ امام احمد بن حنبل سٹی قصور ۔انگریزی ماہ کا دوسرا خطبہ جمعہ:اعجاز الاسلام کوٹ رادھا کشن 
انگریزی ماہ کا تیسرا خطبہ جمعہ :لالو کے نزد الہ آباد۔انگریزی ماہ کا چوتھا جمعہ:مختلف جگہوں پر ہوتا ہے